رسائی کے لنکس

logo-print

اسلحے کی فروخت سے متعلق فیس بک کی نئی سخت پالیسی


اسلحے کی روک تھام کے لیے سرگرم گروپس ایک عرصے سے یہ شکایت کرتے آرہے تھے کہ فیس بک اور دیگر آن سائن سائیٹس بغیر کسی منظوری کے اسلحے کی خریدو فروخت کے لیے استعمال ہو رہی ہیں۔

سماجی رابطوں کی مقبول زمانہ ویب سائیٹ 'فیس بک' نے اعلان کیا ہے کہ وہ اسلحے کی فروخت کے خلاف اقدام کرے گی اور ایسے افراد جو اس ویب سائٹ پر آتشیں اسلحے کی تشہیر یا فروخت کو استعمال کریں گے ان صفحات تک رسائی کو روک دیا جائے گا۔

اس نئی پالیسی کا اطلاق فیس بک کی فوٹو شیئرنگ سروس 'انسٹاگرام' پر بھی ہوگا۔

اسلحے کی روک تھام کے لیے سرگرم گروپس ایک عرصے سے یہ شکایت کرتے آرہے تھے کہ فیس بک اور دیگر آن سائن سائیٹس بغیر کسی منظوری کے اسلحے کی خریدو فروخت کے لیے استعمال ہو رہی ہیں۔

ایسے ہی ایک گروپ کے رکن شانون واٹس کہتے ہیں کہ "بدقسمتی سے اور بغیر کسی نگرانی کے فیس بک نے خطرناک لوگوں کے لیے ایک ایسا پلیٹ فارم مہیا کیا جہاں وہ اسلحہ خرید سکتے ہیں۔"

فیس بک نے 2014ء میں اسلحہ کی تشہیر اور فروخت سے متعلق چند پابندیاں عائد کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ ایسی پوسٹس کی بچوں تک رسائی کو بلاک کرے گی۔ لیکن اس سائیٹ نے نجی حیثیت میں ایسے کاروبار کو اپنا پلیٹ فارم استعمال کرنے سے نہیں روکا تھا۔

مستند اور لائسنس یافتہ اسلحے کے بیوپاری اب بھی فیس بک پر اپنے کاروبار کی تشہیر کر سکیں گے لیکن انھیں اس سائٹ کے ذریعے سودے بازی کرنے کی اجازت نہیں ہو گی۔

XS
SM
MD
LG