رسائی کے لنکس

چکن گونیا میں بخار، سر درد ہوتا ہے، پورا جسم دکھتا ہے اور الرجی ہوتی ہے۔ یہ ایک وبا کی صورت میں پورے ضلع میں پھیلا ہے۔ یکم اپریل تک پورے ضلع کے سرکاری اسپتالوں میں 1500 سے زائد مریض رجسٹر ہو چکے ہیں

بلوچستان کے ساحلی ضلع گوادر میں پھیلی ہوئی بیماری نے وبا کی شکل اختیار کر لی ہے۔ مرض پر قابو پانے کے لئے صوبائی حکومت نے عالمی ادارہٴ صحت کے تعاون سے چار ٹیمیں علاقے میں روانہ کر دی ہیں، کوشش کے باوجود مرض پر قابو نہیں پایا جا سکا۔

ضلع گوادر کے مقامی ڈاکٹروں کے بقول، گزشتہ ڈیڑھ ماہ سے متعدد مریض بخار کے ساتھ گھٹنوں اور کمر درد کی شکایت لے کر اسپتالوں میں آتے رہے۔ لیکن مقامی سرکاری ضلع اسپتال سمیت کسی بھی صحت مرکز میں اس بیماری کی تشخیص کے لئے سہولتیں دستیاب نہیں تھیں۔ اس کے بعد، عالمی ادارہٴ صحت کے تعاون سے اُنتیس مریضوں کے خون کے نمونے ’نیشنل انسٹیٹوٹ آف ہیلتھ‘، اسلام آباد بھیجوا دیے گئے جن میں سے 22 مریضوں کے خون میں ’چکن گونیا‘ مرض کے وائرس کی تصدیق ہو گئی۔

محکمہٴ صحت ضلع گوادر کے اہل کار، ڈاکٹر بشیر علی نے ’وائس آف امریکہ‘ کو بتایا کہ علاقے کے مریضوں میں مرض کی تصدیق کے بعد پورے ضلع میں ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کا آغاز کیا گیا ہے۔

’چکن گونیا‘ ایک وبا کی صورت میں پورے ضلع میں پھیلا ہے۔ یکم اپریل تک پورے ضلع کے سرکاری اسپتالوں میں 1500 سے زائد مریض رجسٹر ہو چکے ہیں اور ابھی تک آ رہے ہیں۔

چکن گونیا میں بخار، سر درد ہوتا ہے، پورا جسم دکھتا ہے اور الرجی ہوتی ہے۔

بقول اُن کے، ’’ڈی جی آفس سے امدادی سامان پہنچ چکا ہے۔ اسپرے کرنے کے لئے دوائی بھی آچکی ہے۔ ہم نے پانچ روز سے اسپرے بھی شروع کیا ہوا ہے جس سے متاثرہ مریضوں کی تعداد بھی کم ہوگئی ہے۔‘‘

قدرتی وسائل سے مالامال اس جنوب مغربی صوبے کے ساحلی ضلع گوادر میں چکن گونیا کے وائرس سے رواں سال جنوری میں لوگ متاثر ہونا شروع ہوگئے تھے۔، مقامی ڈاکٹروں کے مطابق، ابھی تک گوادر بازار، جیونی، پشوکان سمیت دیگر قریبی علاقوں سے لائے جانے والے مریضوں میں اس وائرس کی علامات ظاہر ہو چکی ہیں۔

کوئٹہ میں صوبائی حکومت کی طرف سے جاری کئے گئے بیان میں بتایا گیا ہے کہ چکن گونیا جان لیوا مرض نہیں، البتہ احتیاطی تدابیر اختیار کرنے سے لوگ اس مرض سے بچ سکتے ہیں۔ اختیاطی تدابیر میں اردگرد کے ماحول کو صاف ستھرا رکھنا، ذخیزہ کئے گئے پانی کو ڈھانپنا، اپنے گھروں، محلے میں متواتر اسپرے کرنا روشن دانوں، دروازوں میں جالی لگانا شامل ہے۔

پاکستان اور چین اقتصادی راہداری اور دیگر مدوں میں ہونے والے 50 ارب ڈالر سے زائد مالیت کے منصوبوں میں سرمایہ کاری سے گوادر کی بندرگاہ کو کلیدی حیثیت حاصل ہے۔ لیکن، وفاقی اور صوبائی حکومتیں اب تک اس ضلع میں پینے کے پانی اور صحت عامہ کے مسائل حل کرنے میں کامیاب نہیں ہوئے ہیں۔

ماہر ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ چکن گونیا کا مرض ایک خاص قسم کے مچھر کے کاٹنے سے پیدا ہوتا ہے۔ بظاہر یہ زیادہ خطرناک نہیں۔ لیکن، احتیاطی تدابیر اختیار نہ کرنے اور ’ڈنگو‘ یا دیگر خطرناک امراض کے وائرس سے منسلک ہونے کے بعد یہ جان لیوا بھی ہو سکتا۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG