رسائی کے لنکس

logo-print

امریکی شہر میں میئر کا انتخاب ہیٹ سے بال نکال کر کیا گیا


میئر کا انتخاب ہیٹ سے بال نکال کر کیا جا رہا ہے۔

آپ نے شعبدہ بازوں کو ہیٹ میں سے کبوتر نکالتے تو دیکھا ہو گا، لیکن یہ دیکھا نہ سنا ہو گا کہ ہیٹ میں سے کسی قصبے کی میونسپل کمیٹی کا چیئرمین یا میئر نکل آیا ہو۔

یہ اعزاز حاصل ہے کہ امریکی ریاست ٹیکساس کے ایک قصبے ڈکنسن کو، کہ وہاں مجمع کے سامنے ایک کالے رنگ کے ہیٹ میں سے قصبے کے نئے میئر کا نکالا گیا۔ اسے دیکھ کر مجمع نے تالیاں بجائیں اور میئر نے ان سب کا شکریہ ادا کیا۔

ہوا کچھ یوں کہ ٹیکساس کے اہم شہر ہیوسٹن کے قریب واقع ایک قصبے ڈکنسن میں میونسپل کمیٹی کا الیکشن ہوا۔ مقابلہ دو امیدواروں کے درمیان تھا۔ اور یہ امیدوار تھے شان ورتھ اور جینیفر لارنس۔

الیکشن کے بعد جب ووٹوں کو گنا گیا تو دونوں کو ایک جتنے 1010 ووٹ ملے۔

قانون کے مطابق دوبارہ ووٹ ڈالے گئے۔ لیکن ووٹر اپنے عزم اور ارادوں کے اتنے پکے تھے کہ ایک بھی ووٹ یہاں وہاں نہیں گیا۔ دوبارہ گنتی میں بھی نتیجہ وہی نکلا یعنی دونوں نے دوسری بار بھی 1010 ووٹ ہی حاصل کیے۔

امریکی شہر ہیوسٹن کے نواحی علاقے ڈکنسن میں مئیر کا انتخاب ٹوپی میں سے فعال نکال کر کیا گیا۔ شان سکپ ورتھ اور جینیفر لارنس علاقے کے نئے مئیر کے لیے انتخاب لڑ رہے تھے مگر دونوں کو 1010 ووٹ ملے۔

ریاست ٹیکساس کے قانون کے مطابق اس صورت حال میں فیصلہ ووٹروں کی بجائے قسمت پر چھوڑ دیا جاتا ہے اور پرچی ڈال کر فال نکالی جاتی ہے۔

ڈکنسن کی الیکشن انتظامیہ نے پرچی ڈالنے کی بجائے ایک اور طریقہ اختیار کیا اور ٹیبل ٹینس کی دو سفید چھوٹی گیندوں پر دونوں امیدواروں کے نام لکھ کر انہیں کالے رنگ کے ہیٹ میں ڈال دیا۔

پھر ہیٹ کو سر کی بلندی پر رکھ گیا تاکہ گیندیں نظر آئیں اور ہاتھ بلند کر کے ان میں ایک بال نکالی گئی۔

مقامی اخبار گلوسٹن کاؤنٹی ڈیلی نیوز کے مطابق سکپ ورتھ علاقے کے نئے مئیر بن گئے کیونکہ ہیٹ میں سے پنگ پانگ کی جو گیند باہر نکلی اس پر ان کا نام لکھا ہوا تھا۔

سکپ ورتھ نے مئیر بننے کے بعد کہا کہ ’’میں سب کا شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں جنہوں نے ووٹ دیے۔‘‘

فال میں ہانے والی امیدوار جینیفر لارنس نے مقامی ٹیلی وژن نیٹ ورک سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہیں اس طریقہ کار پر اعتماد ہے اور ’’یہ بالکل اس طرح کیا گیا جیسے کہ اسے ہونا چاہئے تھا۔‘‘

انہوں نے کہا کہ ’’درجنوں لوگ میرے لیے دعا کر رہے تھے۔ میں نے شان سے کہا کہ میں ان کی حمایت کروں گی اور میں ایسا ہی کروں گی۔ میرے خیال میں متحد ہو کر ہی ہم آگے بڑھ سکتے ہیں۔‘‘

ڈکنسن کا قصبہ امریکی شہر ہیوسٹن سے 40 میل کے فاصلے پر واقع ہے اور یہاں کی آبادی 21 ہزار افراد پر مشتمل ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG