رسائی کے لنکس

شمالی یورپ میں شدید طوفان سے نو افراد ہلاک


طوفان کے باعث شمالی یورپ کے کئی ملکوں کی سڑکوں پر ٹرک الٹ گئے

'جرمن ویدر سروس' کے مطابق 2007ء کے بعد جرمنی کو نشانہ بنانے والا یہ سب سے شدید طوفان ہے جسے 'فریڈریکے' کا نام دیا گیا ہے۔

یورپ کے شمالی علاقوں میں جمعرات کو آنے والے شدید طوفان سے کم از کم نو افراد ہلاک ہوگئے ہیں جب کہ پروازوں اور ٹرینوں کا شیڈول بری طرح متاثر ہوا ہے۔

طوفان سے سب سے زیادہ ہلاکتیں جرمنی میں ہوئی ہیں جہاں طوفانی ہواؤں کے باعث طویل فاصلہ طے کرنے والی تمام ٹرینیں ایک دن کے لیے معطل کردی گئی ہیں۔

'جرمن ویدر سروس' کے مطابق 2007ء کے بعد جرمنی کو نشانہ بنانے والا یہ سب سے شدید طوفان ہے جسے 'فریڈریکے' کا نام دیا گیا ہے۔

طوفان کے باعث جرمنی میں اب تک چھ افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہوچکی ہے جن میں امدادی سرگرمیاں انجام دینے والے دو فائر فائٹرزاور دو ٹرک ڈرائیور بھی شامل ہیں جن کے ٹرک طوفانی ہواؤں کی زد میں آکر الٹ گئے تھے۔

طوفان کے باعث جرمنی کے شمالی علاقے بروکن میں جھکڑوں کی رفتار 203 کلومیٹر فی گھنٹہ تک ریکارڈ کی گئی۔

طوفانی ہواؤں کے باعث جرمنی کے بیشتر شہروں میں پروازوں کا شیڈول متاثر ہوا ہے اور سیکڑوں پروازیں، کھیلوں کے مقابلے، تقریبات اور دیگر سرگرمیاں منسوخ کردی گئی ہیں۔

طوفانی ہواؤں کے باعث جرمنی اور نیدرلینڈز میں کئی مقامات پر درخت جڑوں سے اکھڑ کر گرنے سے املاک کو بھی نقصان پہنچا ہے جب کہ ایک اسکول سمیت کئی عمارتوں کی چھتیں اڑ گئی ہیں۔

نیدرلینڈز میں مختلف گاڑیوں پر درخت گرنے کے واقعات میں کم از کم دو افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ ڈچ حکام کے مطابق تیز ہواؤں کے باعث شاہراہوں پر کم از کم 66 ٹرکوں کے الٹنے کی اطلاعات ہیں جن کے باعث بیشتر بڑی شاہراہوں پر ٹریفک کی روانی بری طرح متاثر ہورہی ہے۔

نیدرلینڈز میں طوفانی جھکڑوں کے باعث کئی مقامات پر ریل کی پٹریاں اکھڑنے کی بھی اطلاع ہے جس کے باعث جمعرات کو پورا دن بیشتر ٹرینوں کی آمد و رفت معطل رہی۔

طوفان کے باعث ہونے والے حادثات میں بیلجئم میں کئی افراد زخمی ہوئے ہیں اور املاک کو نقصان پہنچا ہے۔

طوفانی ہواؤں کے باعث آسٹریا میں بھی ایک بڑی ٹرین لائن بند کردی گئی ہے۔

یورپ کو رواں موسمِ سرما میں نشانہ بنانے والا یہ پہلا بڑا طوفان ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG