رسائی کے لنکس

روحانی ایک فوجی پریڈ سے خطاب کر رہے تھے جہاں سے ایک ایرانی خبر رساں ادارے نے کہا ہے کہ 2000 کلومیٹر (1200میل) کے فاصل تک مار کرنے والا ایک نیا بیلسٹک میزائل نمائش کے لیے رکھا گیا ہے، جو جوہری ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے مطالبات پر اظہارِ برہمی کرتے ہوئے، صدر حسن روحانی نے جمعے کے روز کہا کہ کسی ملک کی اجازت لیے بغیر ایران میزائل کی اپنی استعداد بڑھائے گا۔

روحانی ایک فوجی پریڈ سے خطاب کر رہے تھے جہاں سے ایک ایرانی خبر رساں ادارے نے بتایا ہے کہ 2000 کلومیٹر (1200میل) کے فاصلے تک مار کرنے والا ایک نیا بیلسٹک میزائل نمائش کے لیے آویزاں کیا گیا ہے، جو جوہری ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

’تسنیم نیوز ایجنسی‘، نے یہ بات پاسدارانِ انقلاب کی ’ایئرواسپیس ڈویژن‘ کے سربراہ، امیر علی حجازی زادہ کے حوالے سے کہی ہے۔ تاہم، میزائل کے بارے میں مزید تفصیل نہیں بتائی گئی۔

ٹرمپ پر تنقید

منگل کے روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب میں، ٹرمپ نے کہا کہ ایران اپنی میزائل صلاحیت بڑھا رہا ہے؛ اور الزام لگایا کہ وہ اپنی شدت پسند کارروائیاں یمن، شام اور مشرقِ وسطیٰ کے دیگر حصوں کی جانب برآمد کر رہا ہے۔

ٹرمپ نے 2015ء میں امریکہ اور چھ دیگر عالمی طاقتوں کی جانب سے ایران کے ساتھ طے کیے گئے جوہری معاہدے پر بھی نکتہ چینی کی، جس میں معاشی تعزیرات میں نرمی کے بدلے ایران نے اپنے جوہری پروگرام کو محدود کرنے پر اتفاق کیا۔

سرکاری ٹیلی ویژن پر نشر کردہ خطاب میں، روحانی نے کہا کہ ’’طاقت کے ضروری مظاہرے کے طور پر، ہم اپنی دفاعی طاقت بڑھائیں گے۔ ہم اپنی میزائل صلاحیتوں کو مضبوط کریں گے۔ اپنے ملک کے دفاع کے لیے ہم کسی سے اجازت نہیں لیں گے‘‘۔

روحانی کے الفاظ میں ’’اس سال اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں، ماسوائے امریکہ اور (اسرائیل) کی یہودی حکومت کے‘‘، تمام ملکوں نے جوہری معاہدے کی حمایت کی۔

ٹلرسن کا مذاکرات پر زور

امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن نے کہا ہے کہ معاہدے کو تبدیل کیا جائے یا پھر امریکہ اس کا پابند نہیں رہے گا۔ ایران نے کہا ہے کہ اُس کے جوہری معاہدے پر دوبارہ مذاکرات نہیں ہوسکتے۔

امریکہ کی جانب سے معاہدے سے ہٹنے کے امکان نے امریکہ کے اُن اتحادیوں کو پریشان کیا ہے جنھوں نے سمجھوتا طے کرنے میں مدد کی تھی، خاص طور پر ایسے میں جب دنیا شمالی کوریا کے جوہری اور بیلسٹک میزائل سے نبردآزما ہے۔

چین کے وزیر خارجہ وینگ یی نے کہا ہے کہ جزیرہٴ کوریا کے بارے میں تناؤ ایرانی سمجھوتے کی اہمیت کی نشاندہی کرتا ہے اور چین اُس کی حمایت جاری رکھے گا۔

بیلسٹک میزائل کے تجربے کے بعد، ٹرمپ نے فروری میں ایران کو انتباہ جاری کیا تھا اور اُس کا میزائل پروگرام، جس کا مقصد مشرق وسطیٰ میں اپنے عزائم کو بڑھاوا دینا تھا، کی پاداش میں جولائی میں نئی معاشی پابندیاں عائد کردی تھیں۔

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے جمعرات کو کہا ہے کہ ایران کے خلاف امریکہ کی جانب سے یکطرفہ تعزیرات عائد کرنا ’’غیر قانونی اقدام ہے اور اجتماعی نوعیت کی بین الاقوامی کوششوں کے لیے نقصاندہ ہے‘‘۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG