رسائی کے لنکس

خلائی تسخیر اور مریخ مشن، ناسا کے بجٹ میں 19.5 ارب ڈالر کا اضافہ


ٹرمپ نے کہا ہے کہ نئے قانون کے تحت ’ناسا‘ کے خلائی تسخیر کے اصل مشن کو تقویت ملے گی، جب کہ یہ کام ’ایئرو اسپیس‘ کی نجی کمپنیوں کو منتقل کیا جائے گا

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ ایک بِل پر دستخط کرکے اُسے قانون کی شکل دے دی ہے، جس کے تحت ’نیشنل ایئروناٹکس اینڈ اسپیس ایڈمنسٹریشن (ناسا)‘ کے بجٹ میں اضافہ کیا گیا ہے، کرہٴ ارض سے متعلق ادارے کا پروگرام جاری ہے اور مریخ کی تسخیر کا ہدف بحال رکھا گیا ہے۔

اِس اقدام کے ذریعے ۔ناسا کے بجٹ میں 19.5 ارب ڈالر کا اضافہ کیا گیا ہے۔ ٹرمپ کی جانب سے گذشتہ ہفتے کانگریس کے سامنے پیش کی گئی ابتدائی بجٹ تجویز میں 19.1 ارب ڈالر کی رقم مختص کی گئی ہے، جو اخراجات میں کٹوتی کی جاری کوششوں کی غماز ہے

ٹرمپ نے کہا ہے کہ اس قانون کی رو سے ناسا کے خلا کی تسخیر کے اصل مشن کو تقویت ملے گی، جب کہ یہ کام ’ایئرو اسپیس‘ کی نجی کمپنیوں کو منتقل کیا جائے گا۔

دستخط کے لیے اوول آفس میں منعقدہ تقریب، جس میں دونوں جماعتوں سے تعلق رکھنے والے قانون ساز موجود تھے، ٹرمپ نے کہا کہ ’’مجھے امید ہے کہ وہ ہمیں بہت زیادہ پیسے دیں گے‘‘۔

اقدام میں ادارے سے کہا گیا ہے کہ وہ 2030ء میں مریخ مشن روانہ کرنے کا پروگرام مرتب دے، جب کہ اکیسویں صدی ہی میں ’’کسی دوسرے سماوی مقام پر سکونت کے امکانات کو تلاش کرنے کی جستجو کرے‘‘۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG