رسائی کے لنکس

logo-print

امریکہ: ٹیکساس میں متواتر دھماکے


دھماکے کی جگہ پر کمبل لپیٹے ایک خاتون ورکر پولیس سے بات کر رہی ہے۔

امریکی ریاست ٹیکساس میں آجکل ایک سیریل بمبار دھماکے کر رہا ہے۔ اتوار رات سین انٹونیو کے قریب فیڈ ایکس کوریر کمپنی میں ایک پارسل بم دھماکہ ہوا۔ یہ پارسل آسٹن بھیجا جا رہا تھا۔ اس سے پہلے ریاست ٹیکساس ہی کے شہر آسٹن میں تین دھماکے ہو چکے ہیں۔ حکام یہ پتا لگانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ آیا یہ دھماکہ اسی سلسلے کی کڑی ہے۔

اس دھماکے میں ایک شخص زخمی ہوا، وفاقی ایجنٹ اس وقت جائے وقوعہ پر موجود ہیں۔ ایف بی آئی کے خصوصی ایجنٹ مائکل لی نے کہا ہے کہ “ یہ بے وقوفی ہو گی اگر ہم اس دھماکے کو گزشتہ دھماکوں سے منسلک نہ کریں”

امریکی تفتیش کاروں کا کہنا ہے کہ اتوار کی رات پھٹنے والے بم کو ٹرپ وائر کے ذریعے پھاڑا گیا اور یہ پہلے تین دھماکوں کےمقابلے میں زیادہ پیچیدہ تھا۔

حکام کے مطابق اس دھماکے میں دو نوجوان زخمی ہوئے جن کی عمریں 20 سال کے لگ بھگ ہیں۔ آسٹن کے پولیس چیف برائن مینلی کے مطابق ان دونوں کو شدید زخم آئے ہیں لیکن مقامی اسپتال میں ان کی حالت بہتر ہے۔

انہوں نے کہا کہ تفتیش کاروں کو اتوار کے رات کے دھماکے اور اس سے پہلے 2 مارچ کو ہونے والے دھماکوں میں مماثلت ملی ہے۔ ان دھماکوں میں دو افراد ہلاک اور دو زخمی ہوئے تھے۔ ان تینوں واقعات میں پارسل لوگوں کے دروازوں کے باہر رکھے گئے تھے اور یہ اس وقت پھٹے جب ان لوگوں نے پارسل اٹھائے۔

حکام کا کہنا ہے کہ لوگوں کو ہر مشتبہ چیز سے دور رہنا چاہیے۔ پولیس ان دھماکوں کی تفتیش نفرت پر مبنی جرائم کے پس منظر میں بھی کر رہی ہے کیونکہ پہلے ہونے والے تین دھماکوں میں 2 سیاہ فام امریکی مرد ہلاک اور ایک 75 سالہ ہسپانوی امریکی خاتون شدید زخمی ہوئی جو اپنی زندگی کی جنگ لڑ رہی ہے۔ لیکن دھماکوں کے حالیہ شکار سفید فام افراد تھے۔

حکام نے دھماکوں میں ملوث افراد کی نشاندہی کرنے یا ان تک پہنچنے میں مدد فراہم کرنے والے افراد کے لیے ایک لاکھ امریکی ڈالر کے انعام کا اعلان کیا ہے۔

حکام نے یہ اعلان بھی کیا ہے کہ وہ شخص یا لوگ جو یہ دھماکے کر رہے ہیں وہ پولیس سے بات کریں اور بتائیں کہ وہ ایسا کیوں کر رہے ہیں۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG