رسائی کے لنکس

’آزادی کی نعمت اور اپنے ہیروز کے حوصلے پر خدا کا شکر‘


ٹرمپ نے اگست میں افغانستان کی جنگ میں امریکہ کے کردار کو وسعت دینے کا فیصلہ کیا۔ اُنھوں نے کہا ہے کہ ’’مزید گنجائش نہیں کہ ہم محض گھوم پھر کر وقت ضائع کریں۔ ہم فتحیاب ہونے کے لیے لڑ رہے ہیں۔ گذشتہ تین سے چار ماہ کے دوران آپ نے نئے حوصلے سے فرائض انجام دیے ہیں، جو کام ہر کسی کے بس کا نہیں ہوا کرتا‘‘

صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے جمعرات کے روز امریکی فوجوں کو سراہا اور اُن کی خدمات پر اُن کا شکریہ ادا کیا۔ یوم تشکر کے موقع پر دنیا بھر میں اپنے فوجیوں کے لیے پیغام میں اُنھوں نے بحیثیتِ صدر اپنی ذاتی کامیابیوں کی جانب توجہ مبذول کرائی۔

ایک وڈیو ٹیلی کانفرنس میں ٹرمپ نے کہا ہے کہ ’’آپ سے مخاطب ہونا عزت افزائی کی بات ہے کہ ہم آزادی کی نعمت اور اپنے ہیروز کی دلیری پر خدا کا شکر ادا کرتے ہیں، اور حوصلے کے اُن جذبات کو یاد کرتے ہیں جو ملکی دفاع اور آزادی کو سربلند رکھنے کے لیے آپ بجا لاتے ہیں‘‘۔

صدر تعطیل کا یہ اختتام ہفتہ فلوریڈا کے اپنے نجی صحت افزا مقام، ’مارلو اے لاگو کلب‘ میں گزار رہے ہیں۔ اُنھوں نے عراق اور افغانستان میں امریکی فوج کی حالیہ کامیابیوں کا بھی حوالہ دیا۔

ٹرمپ نے اگست میں افغانستان کی جنگ میں امریکہ کے کردار کو وسعت دینے کا فیصلہ کیا۔ اُنھوں نے کہا کہ ’’مزید گنجائش نہیں کہ ہم محض گھوم پھر کر وقت ضائع کریں۔ ہم فتحیاب ہونے کے لیے لڑ رہے ہیں۔ گذشتہ تین سے چار ماہ کے دوران آپ نے نئے حوصلے سے فرائض انجام دیے ہیں، جو کام ہر کسی کے بس کا نہیں ہوا کرتا‘‘۔

افغانستان میں چوٹی کے امریکی کمانڈر، جنرل جان نکلسن نے اس ہفتے تسلیم کیا کہ 16 برس کا تنازعہ تعطل کا شکار ہے، اور باغی تقریباً اتنے ہی رقبے اور آبادی پر قابض ہیں، جیسا کہ معاملہ گذشتہ سال تھا۔

تاہم، امریکی افواج نے عراق اور شام میں داعش کے خلاف لڑائی میں خاصی پیش رفت دکھائی ہے۔ عراق کے بارے میں ٹرمپ نے کہا کہ ’’یقینی طور پر ہم فتحیاب ہو رہے ہیں‘‘۔ اُنھوں نے مزید کہا کہ گذشتہ امریکی انتظامیائیں ’’نہیں چاہتی تھیں کہ آپ جنگ جیتیں‘‘۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG