رسائی کے لنکس

طالبان انسانی حقوق کا احترام کریں تو ان کے ساتھ تعاون پر تیار ہیں، یورپی یونین


یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزف بوریل، فائل فوٹو

یورپی بلاک کی خارجہ پالیسی کے سربراہ نے منگل کو کہا کہ یورپی یونین طالبان کی اقتدار میں واپسی کے بعد صرف اسی صورت میں ہی افغان حکومت کے ساتھ تعاون کرے گی جب وہ بنیادی حقوق بشمول خواتین کے حقوق کا احترام کریں اور افغانستان کی سرزمین کو دہشت گردوں کے استعمال سے روکیں۔

جوزف بوریل نے یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کے ہنگامی اجلاس کے بعد ایک بیان میں یورپی یونین کے موقف کا خاکہ پیش کیا تاکہ طالبان کے فوری قبضے پر بات کی جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ "افغانستان میں بگڑتی ہوئی انسانی صورت حال" سے نمٹنے کے لیے یورپی یونین افغان عوام کو مدد فراہم کرتی رہے گی۔

کسی بھی مستقبل کی افغان حکومت کے ساتھ تعاون پرامن اور جامع تصفیے سے مشروط ہوگا جس میں خواتین، نوجوانوں اور اقلیتوں سے تعلق رکھنے والے افراد کے احترام کے ساتھ ساتھ افغانستان کی بین الاقوامی ذمہ داریوں کا احترام، بدعنوانی کے خلاف جنگ کا عزم اور دہشت گرد تنظیموں کی جانب سے افغانستان کی سرزمین کے استعمال کو روکنا شامل ہیں۔

بوریل نے تمام متعلقہ فریقوں پر زور دیا کہ وہ افغان خواتین، مردوں اور ضرورت مند بچوں اور اندرونی طور پر بے گھر افراد کو انسانی ہمدری کی امداد تک محفوظ اور بلا روک ٹوک رسائی کی اجازت دیں۔

انہوں نے مزید کہا، "یورپی یونین طالبان سے مطالبہ کرتی ہے کہ وہ بین الاقوامی انسانی قوانین کے تحت اپنی ذمہ داریوں کا احترام کریں۔ یورپی یونین افغانستان کے پڑوسیوں پر موجودہ صورت حال کے منفی اثرات سے نمٹنے میں بھی مدد کرے گی، جس کے متعلق توقع ہے کہ مہاجرین اور تارکین وطن کی تعداد میں اضافہ ہو گا۔"

بوریل نے کہا کہ یورپی یونین کی ترجیح یورپی یونین کے عملے اور ان کے افغان مددگاروں کو کابل سے نکالنا ہے۔

انہوں نے میٹنگ کے بعد ایک نیوز کانفرنس میں کہا، "ہمیں کابل میں حکام سے رابطہ کرنا ہوگا۔ طالبان جنگ جیت چکے ہیں، لہذا ہمیں ان سے بات کرنی ہوگی۔"

بوریل نے کہا کہ ممکنہ نقل مکانی اور انسانی بحران کو روکنے کے لیے جلد ہی بات چیت شروع کرنا ضروری ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG