رسائی کے لنکس

logo-print

برطانیہ: مسلسل بد زبانی پر پانچ شرارتی طوطے پنجرہ بدر


فائل فوٹو

برطانیہ کے ایک چڑیا گھر کی انتظامیہ کو پانچ سرمئی رنگ کے شرارتی طوطے باقی طوطوں سے الگ کرنے پڑ گئے ہیں۔ طوطوں کی دیکھ بھال کرنے والوں کے مطابق یہ پانچوں ایک دوسرے کو گالیاں دینے پر ابھارتے تھے۔

بلی، ایرک، ٹائسن، جیڈ اور ایلسی کو 'لنکن شائر وائلڈ لائف سینٹر' میں 200 طوطوں کی کالونی میں اگست میں شامل کیا گیا تھا۔

جلد ہی ان طوطوں کی بد زبانی کا چرچا عام ہو گیا۔

چڑیا گھر کے چیف ایگزیکٹو سٹیو نکولس کا کہنا ہے کہ طوطوں کی بد زبانی کے واقعات پہلے بھی ہوتے رہتے تھے۔ مگر ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ ایک ساتھ پانچ طوطے ایسا کریں۔ اکثر طوطے بھڑاس نکال کر چپ کر جاتے ہیں۔ مگر یہ تو کسی وجہ سے اس سے لطف لیتے ہیں۔

ان کے مطابق چڑیا گھر کی سیر کرنے والوں میں سے ابھی تک کسی نے ان طوطوں کی شکایت نہیں کی بلکہ اکثر افراد کے لیے تو یہ صورتِ حال مزاحیہ ہوتی ہے۔

آئن اسٹائن، مختلف آوازیں نکالنے والا طوطا
please wait

No media source currently available

0:00 0:01:02 0:00

انہوں نے کہا کہ جب کوئی طوطا آپ کو گالی دیتا ہے تو لوگ اس پر خوش ہوتے ہیں۔ اور کرونا وائرس سے متاثر اس سخت سال میں لوگوں کے چہروں پر بڑی سی مسکراہٹ آ جاتی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ان طوطوں کو علیحدہ کرنے کی وجہ انہیں بچوں کی پہنچ سے دور رکھنا ہے۔

ان کے مطابق ان پانچ طوطوں کو ایک دوسرے سے الگ کر کے پارک کے مختلف حصوں میں رکھا گیا ہے تاکہ یہ بد زبانی میں ایک دوسرے کی حوصلہ افزائی نہ کر سکیں۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG