رسائی کے لنکس

logo-print

مشینی ہاتھ سے دل کی تیز دھڑکن کا علاج


مشینی ہاتھ سے دل کی تیز دھڑکن کا علاج

برطانیہ کے ایک ہسپتال میں ڈاکٹروں نے روبوٹ کا استعمال کرکے دل کی تیز دھڑکن کا کامیابی سے علاج کیا ہے۔

فائل فوٹو
فائل فوٹو

اس ہفتے کیے گئے اپنی طرز کے اس پہلے آپریشن کے دوران ڈاکٹر اینڈرے نِگ (Andre Ng) نے مشینی ہاتھ کے ذریعے مریض کی ناف کے نیچے سے گزرنے والی خون کی نالیوں میں باریک تاریں داخل کیں اور ان کو دھکیلتے ہوئے دل کے اندرپہنچا دیا۔

تاروں پر نصب آلات کی مدد سے متاثرہ حصے کی شناخت کے بعد دل کی دھڑکن خراب کرنے والے خلیوں کو جلا دیا گیا۔ایک گھنٹے پر محیط عمل کے دوران ڈاکٹر نِگ آپریشن تھیٹر سے ملحقہ کمرے میں موجود تھے۔

یہ طریقہِ علاج پچھلی دو دہایوں سے دل کی تیز دھڑکن کی درستگی کے لیے موٴثر جانا جاتا ہے لیکن اب تک تمام عمل ڈاکٹر زاپنے ہاتھ سے سر انجام دیتے رہے ہیں۔عام آپریشن کے دوران تابکاری سے بچنے کے لیے ڈاکٹروں کو سیسے سے بنے ہوئے اِپرنز (Aprons) پہننے پڑتے ہیں اور اس بھاری لباس کو زیبِ تن کرنے کی وجہ سے ڈاکٹروں کو تھکاوٹ ہو جاتی ہے جس کی وجہ سے ان کو توجہ مرکوز رکھنے میں دشواری پیش آ سکتی ہے۔

ڈاکٹر نِگ کا کہنا تھا کہ مشینی آپریشن کے دوران انھوں نے ”مکمل کنٹرول“ محسوس کیا۔

ڈاکٹروں کے مطابق اس کامیابی کے بعدڈاکٹرزکا دوسرے شہر یا ملک میں ہوتے ہوئے ربوٹ کی مدد سے آپریشن کرنا ممکن ہو گیا ہے ۔

XS
SM
MD
LG