رسائی کے لنکس

ایرانی پارلیمنٹ: نئی کابینہ کے 16 وزرا کی توثیق


صدر روحانی کی کابینہ میں 18 وزرا کی گنجائش ہے لیکن انہوں نے سائنس  کی وزارت کے لیے کسی کا نام تجویز نہیں کیا۔ اس وزارت کا سربراہ تعلیم کے شعبے کا بھی انچارج ہوتا ہے۔

ایران کے قانون سازوں نے اتوار کے روز حال ہی میں دو بارہ منتخب ہونے والے صدر حسن روحانی کی 16 رکنی کابینہ کی منظوری دی، جس میں گزشتہ 25 برسوں میں پہلی بار ایک ایسے شخص کو وزیر دفاع بنایا گیا ہے جس کا تعلق کٹڑ نظریات کی حامل سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی سے نہیں ہے۔

پارلیمنٹ کے اسپیکر علی لاری جانی نے کہا ہے کہ قانون سازوں نے 17 وزرا کی مجوزہ فہرست میں سے 16 ناموں کی منظوری دی ہے۔جن میں وزیر خارجہ جاوید ظریف کو 236 ووٹ ملے ہیں ، جب کہ بگان زنگنو نے پارلیمنٹ کے 288 میں سے 230 ووٹ حاصل کیے۔ پارلیمنٹ کے کل ارکان کی تعداد 290 ہے۔

وزارت دفاع کے لیے صدر کے نامزدہ کردہ جنرل امیر حاتمی نے 261 ارکان پارلیمنٹ کی تائید حاصل کی۔

گذشتہ 25 سال میں یہ پہلا موقع ہے کہ ایران نے ایک ایسے شخص کو وزیر دفاع کے طور پر مقرر کیا ہے جس کا تعلق کٹڑ نظریات رکھنے والی عسکری فورس پاسداران انقلاب اسلامی سے نہیں ہے۔

حاتمی ، جن کی عمر 51 سال ہے، کہا ہے کہ پارلیمنٹ نے جس میزائل پروگرم کی منظوری دی ہے، وہ میرے ایجنڈے پر ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم اپنے بیلسٹک میزائل پروگرام کو ترقی دینے کے لیے خصوصی اقدامات کریں گے۔

صدر روحانی نے حاتمی پر زور دیا ہے کہ ملک کے دفاعی ذخائر میں اضافے کے لیے جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لانے کے ساتھ ساتھ ملک کی باقاعدہ فوج اور سپاہ پاسداران انقلاب کے درمیان تعلقات بہتر بنانے کے اقدامات کریں۔

صدر روحانی کی کابینہ میں 18 وزرا کی گنجائش ہے لیکن انہوں نے سائنس کی وزارت کے لیے کسی کا نام تجویز نہیں کیا۔ اس وزارت کا سربراہ تعلیم کے شعبے کا بھی انچارج ہوتا ہے۔

ایران کے قانون کے تحت صدر اس وزارت کے امور کی نگرانی خود کر سکتے ہیں جس کے لیے وہ سربراہ مقرر نہیں کرتے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG