رسائی کے لنکس

logo-print

داعش کے خلاف امریکی اتحاد پیش رفت جاری رکھے گا: صدر اوباما


صدر نے کہا کہ "آنے والے دنوں اور ہفتوں میں ہمارا ارادہ اور زیادہ کچھ کرنے کا ہے۔ ہر روز بیدار ہونے والی داعش کی قیادت یہ سمجھے گی کہ یہ اس کا آخری دن ہو سکتا ہے۔"

امریکہ کے صدر براک اوباما نے کہا ہے کہ شام اور عراق میں شدت پسند گروہ داعش دفاعی پوزیشن پر چلا گیا ہے اور امریکہ کی زیر قیادت اتحاد اس کے خلاف اپنی پیش رفت جاری رکھے گا۔

بدھ کو امریکی سنٹرل ایجنسی "سی آئی اے" کے صدر دفتر کے دورے کے موقع پر ان کا کہنا تھا کہ "آج شام اور عراق میں داعش دفاعی پوزیشن پر ہے۔ ہمارا 66 رکنی اتحاد بشمول عرب شراکت دار جارحانہ پوزیشن پر۔"

امریکی فوج اور انٹیلی جنس کے اعلیٰ عہدیداروں کے ہمراہ صدر اوباما (داعش کے) خلاف لڑائی میں پیش رفت کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ 11500 حملوں سے شدت پسند گروپ کی اعلیٰ قیادت اور ہزاروں جنگجوؤں کو پسپا کیا۔

"شام اور عراق میں داعش کا حلقہ اثر سکڑ رہا ہے۔ جنگجوؤں کے تعداد دو سالوں کے دوران سب سے کم سطح پر اور انھیں ادراک ہوتا جا رہا ہے کہ وہ اپنے مقصد میں ہار رہے ہیں۔"

ذرائع ابلاغ کے لیے جاری کیے گئے ایک پیغام میں صدر نے داعش کے کیمیائی ہتھیاروں کے پروگرام کے سربراہ ابو داؤد کی گرفتاری، گروپ کے عراق میں مالی معاملات کے متنظم ابو صلاح کی ہلاکت کے تناظر میں کہا کہ داعش کی قیادت کے لیے "گزشتہ چند ماہ بہت برے تھے''۔

"آنے والے دنوں اور ہفتوں میں ہمارا ارادہ اور زیادہ کچھ کرنے کا ہے۔ ہر روز بیدار ہونے والی داعش کی قیادت یہ سمجھے گی کہ یہ اس کا آخری دن ہو سکتا ہے۔"

صدر اوباما نے کہا کہ امریکہ کی زیر قیادت اتحادی فورسز کی مدد سے عراقی فورسز نے رمادی سے دریائے فرات تک کامیابی حاصل کی اور بہت سے دیہاتوں کو داعش کے قبضے سے چھڑایا۔

شام کی صورتحال سے متعلق امریکی صدر نے کہا کہ مقامی فورسز نے داعش کو الشدادی سے نکال باہر کیا جو کہ رقہ اور موصل کے درمیان اس گروپ کے لیے رسد کی نقل وحمل کا حساس علاقہ تھا۔

XS
SM
MD
LG