رسائی کے لنکس

logo-print

خواتین پر تیزاب سے حملوں کے خلاف قانون سینیٹ سے منظور


خواتین پر تیزاب سے حملوں کے خلاف قانون سینیٹ سے منظور

پاکستان کے ایوان بالا یعنی سینیٹ نے ملک میں تیزاب اور دیگر کیمیائی مواد پھینک کر خواتین کو تشدد کا نشانہ بنانے کے جرائم کی حوصلہ شکنی کے لیے پیر کو ایک قانون کی متفقہ منظوری دی ہے۔

بل مسلم لیگ (ق) کی سینیٹر نیلوفر بخیتار نے پیش کیا۔ قومی اسمبلی رواں سال مئی میں اس قانون کو پہلے ہی منظور کر چکی ہے۔

اراکین پارلیمان کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں مناسب و موثر قوانین کی عدم موجودگی کے باعث ملک میں خواتین پر تیزاب پھینکنے کے واقعات سامنے آرہے تھے تاہم اُنھوں نے اس امید کا اظہار بھی کہ نئے قانون کی منظوری کے بعد ایسے جرائم کے تدارک میں مدد ملے گی۔

اب نئے قانون کے مطابق کسی شخص کو تیزاب سے ضرر پہنچانے والے مجرم کو 14 سال قید کی سزا سنائی جا سکے گی جب کہ عدالت مجرم پر 10 لاکھ روپے تک جرمانہ بھی عائد کرنے کی مجاز ہو گی۔

پارلیمان کے دونوں ایوان سے منظور ہونے والا یہ قانون صدر پاکستان کے دستخط کے بعد نافذ العمل ہو گا۔

XS
SM
MD
LG