رسائی کے لنکس

logo-print

ریلوے میں 60 ارب کا خسارہ، وزیر ریلوے سعد رفیق سپریم کورٹ طلب


پاکستان سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے ازخود نوٹس میں پاکستان ریلوے میں بڑے پیمانے پر نقصانات کے کیس کی سماعت کرتے ہوئے ریلوے کے وزیر خواجہ سعد رفیق اور اعلی عہدے داروں کی طلبی کے نوٹس جار ی کر دیے۔

اگلی سماعت 12 اپریل کو ہو گی۔

آڈٹ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ریلوے کا خسارہ بڑھ کر 60 ارب روپے ہو گیا ہے۔

سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار نے بھارتی سیاست دان لالو پرساد یادیو کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ معمولی تعلیم رکھنے والے اس شخص نے اپنی ریلوے کو ایک منافع بخش ادارہ بنا دیا تھا۔ اور اس کے کام کا اعتراف ہارورڈ یونیورسٹی تک میں کیا جاتا ہے جب کہ ہمارے ہاں سیاسی جلسوں میں یہ بتایا جاتا ہے کہ ریلوے کو منافع بخش بنا دیا گیا ہے جب کہ اسے اربوں کا گھاٹا ہو رہا ہے۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ یہاں بادشاہت ہے جس کا جو جی چاہتا ہے کرتا پھرتا ہے۔

دوسری جانب وزیر ریلوے سعد رفیق میں ایک ٹویٹ میں اپنا ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے کبھی یہ دعوی نہیں کیا کہ ریلوے منافع میں جا رہی ہے بلکہ یہ کہا ہے کہ انہوں نے ریلوے کو اپنے پاؤں پر کھڑا کر دیا ہے اور 20 ارب روپے کمانے والا محکمہ اب 50 ارب سالانہ کما کر دے رہا ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG