رسائی کے لنکس

logo-print

مذاکرات سے گریز پر اسد انتظامیہ اور باغیوں کی مذمت


عرب لیگ کے نئے سفارت کار اخضر ابراہمی

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بن کی مون نے دنیا کی اقوام اور شام پر زور دیا کہ وہ اس تنازعے کے حل کے لیےعرب لیگ کے نئے سفارت کار اخضر ابراہمی کی سفارتی کوششوں کی حمایت کریں

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بن کی مون نے مذاکرات کی بجائے تشدد اور طاقت کے استعمال کا چناؤ کرنے پر شام کی حکومت اور باغی تنظیموں کی مذمت کی ہے۔

پیر کے روز جنیوا میں انسانی حقوق کی عالمی کونسل کے تین ہفتوں پر محیط اجلاس کی افتتاحی تقریب میں خطاب کرتے ہوئے عالمی ادارے کے سربراہ مسٹر مون نے سلامتی کونسل میں غیر منصافانہ موقف کے باعث شام کے بحران کے حل میں ناکامی پر بھی تاسف کا اظہار کیا ہے۔

مسٹر بن کی مون نے کانفرنس کے مندوبین کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ انہیں شام میں سرکاری فورسز کی طرف سے عام شہریوں پر فضائی حملوں اور بم برسانے پر بہت دکھ ہوا ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ ایک او رافسوس ناک پہلو یہ ہے کہ شام میں فرقہ وارانہ کشیدگی بڑھ رہی ہے اور انسانی بہبود کی صورت حال مسلسل بگڑ رہی ہے۔

مسٹر بن نے دنیا کی اقوام اور شام پر زور دیا کہ وہ اس تنازعے کے حل کے لیےعرب لیگ کے نئے سفارت کار اخضر ابراہمی کی سفارتی کوششوں کی حمایت کریں ۔

نئے سفارت کار اخضر ابراہیمی نے پیر کے روز قاہرہ میں مصر اور عرب لیگ کے عہدے داروں سے ملاقاتیں کیں ہیں۔

خصوصی سفارت کا نے دمشق کے متوقع دورے سے قبل مصر کے صدر محمد مرسی اور عرب لیگ کے سیکرٹری جنرل نبیل العربی سے ملاقات کی۔

ابراہیمی کے ایک ترجمان نے کہاہے کہ تفصیلات طے ہونے کے بعد شام کے دورے کی تاریخ کااعلان کیا جائے گا۔
XS
SM
MD
LG