رسائی کے لنکس

logo-print

چیچنیا کے سربراہ سمیت چار دیگر روسیوں کے خلاف مالی تعزیرات عائد


امریکہ نے پانچ روسیوں کا نام مالی اعتبار سے ناپسندیدہ افراد کی فہرست میں شامل کیا ہے، جن میں چیچنیا کے طاقتور شخص، رمضان قادروف شامل ہیں، جن پر سرکاری بدعنوانی سے پردہ اٹھانے کی کوشش کرنے والے افراد کے خلاف جبری ہتھکنڈے استعمال کرنے کا الزام ہے۔

امریکی محکمہٴ خزانہ نے بدھ کے روز کہا ہے کہ چیچنیا کے سربراہ کے طور پر، قادروف ’’ایسی انتظامیہ کی قیادت کرتے ہیں جو لوگوں کے لاپتا ہونے اور ماورائے عدالت ہلاکتوں میں ملوث ہے۔ قادروف کے ایک سیاسی مخالف کے لیے بتایا جاتا ہے کہ اُن کی ہدایات پر اُنھیں قتل کروایا گیا، جس سے قبل چیچنیا سے اذیت رسانی اور بدسلوکی کے الزامات موصول ہوتے رہے ہیں، جن میں ذاتی طور پر قادروف کے ہاتھوں اذیت رسانی کی داستانیں شامل ہیں‘‘۔

علاوہ ازیں، امریکہ نے ایک قیدخانے کے داروغے اور چیچنیا کی وزارت داخلہ کے امور کی ایک شاخ کے سربراہ، ایوب کتائیف پر الزام لگایا ہے کہ وہ ماورائے عدالت ہلاکتوں اور انسانی حقوق کی دیگر خلاف ورزیوں میں ملوث رہے ہیں، جن میں ہم جنس پرستوں سے اذیت ناک رویہ برتنے کا الزام شامل ہے۔

امریکہ نے تین دیگر افراد پر بھی الزام عائد کیے ہیں جن میں الیگزی شیشنیا، یولیا میورووا اور آندرے پاولوف شامل ہیں، جو 23 کروڑ ڈالر مالیت کی ٹیکس چوری کی سازش میں ملوث رہے ہیں، جس سے اٹارنی سرگئی میگنسکائی نے پردہ اٹھایا ہے، جو روس میں قائم ’ہرمیٹیج فنڈ‘ سے وابستہ ہیں۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG