رسائی کے لنکس

واشنگٹن میں اسلحہ رکھنے پر سخت کنٹرول کے حق میں بڑا مظاہرہ


واشنگٹن مین اسلحے پر سخت کنٹرول کے لیے مظاہرہ۔ 24 مارچ 2018

ہفتے کے روز واشنگٹن میں ہزاروں افراد نے 'زندگی کے حق کے لیے مارچ' میں شرکت کی۔ اس مظاہرے کا مقصد امریکی سکولوں میں فائرنگ کے بڑھتے ہوئے واقعات کی جانب مبذول کراتے ہوئے یہ پیغام دینا تھا کہ ہتھیاروں پر کنٹرول کے لیے سخت قوانین کی ضرورت ہے۔

مارچ کے منتظمین کو مظاہرے میں پانچ لاکھ افراد شرکت کی توقع ہے۔

ہفتے کے روز کا یہ مظاہرہ فلوریڈا کے علاقے پارک لینڈ کے میرجوری سٹون میں ڈگلس ہائی اسکول کے طالب علموں نے ترتیب دیا ہے جہاں 14فروری کو اسکول میں بڑے پیمانے کی شوٹنگ کے تازہ ترین واقعے میں 17 لوگ ہلاک ہو ئے تھے ۔

طالب علم منتظمین یہ مطالبہ کر رہے ہیں کہ بچوں کی زندگیوں کو ملک کے لیے ایک ترجیح بنایا جانا چاہیے ۔ وہ اسکولوں میں بڑے پیمانے کی شوٹنگز کی وبا کے خاتمے کا مطالبہ بھی کر رہے ہیں۔

واشنگٹن میں مظاہرے کے شرکا- 24 مارچ 2018
واشنگٹن میں مظاہرے کے شرکا- 24 مارچ 2018

امریکہ کی پچاس ریاستوں میں سے ہر ایک میں اور دنیا بھر میں 800 سے زیادہاحتجاجی مظاہروں کی منصوبہ بندی کی گئی ہے۔

ہفتے کے روز ایک امریکی خاتون جینیفر سمتھ نے، جو آسٹریلیا میں مقیم ہیں اور سڈنی میں مارچ فار آور لائیوز کی ایک منتظم ہیں، کہا کہ جب میں اپنے بچوں کو اسکول بھیجتی ہوں تو مجھے کبھی ان کے بارے میں یہ فکر نہیں ہوتی کہ انہیں فائرنگ کے کسی ایسے واقعے کا سامنا ہو گا ۔ لیکن امریکہ بھر میں ہمارے خاندان اور دوست ہیں اور میں ان سب کے لیے یہ امید رکھتی ہوں کہ چاہے آپ طالب علم ہیں یا کسی کنسرٹ میں جانے والے کوئی شخص ہیں ، آپ کو یہ خوف نہیں ہونا چاہیے کہ وہاں آپ گولیوں کا نشانہ بن کر ہلاک ہو سکتے ہیں۔

واشنگٹن کے مظاہرے کا ایک پلے کارڈ
واشنگٹن کے مظاہرے کا ایک پلے کارڈ

امریکی اپنے اسلحے سے دستبرداری اختیار کرنے میں پس وپیش کرتے رہے ہیں اور بڑے پیمانے پر شوٹنگز کے واقعات کے رد عمل میں اسلحے کے قوانین میں صرف چند تبدیلیاں کی گئی ہیں۔

تاہم امریکی خبر رساں ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس 'اے پی'اور "این او آر سی"کے مرکز برائے تحقیق و تعلقات عامہ کی طرف سے منعقد کیے گئےرائے عامہ کے ایک نئے جائزے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ اب لوگوں کے خیالات میں تبدیلی آسکتی ہے۔

جائزے سے ظاہر ہوا کہ سروے میں شامل69 فیصد امریکی اب یہ خیال کرتے ہیں کہ اسلحے کے قوانین کو سخت کیا جانا چاہیے۔ جب کہ اکتوبر 2016ء میں گن کنٹرول کی حمایت کی شرح 61 فیصد اور 2013ء میں اس ب بارے میں کروائے گئے پہلے سروے میں یہ شرح 55 فیصد تھی۔

سروے کے مطابق 90 فیصد ڈیموکریٹس اور 50 فیصد ریپبلکنز اب سخت گن کنٹرول کے اقدام کے حامی ہیں جب کہ اسلحہ رکھنے والے54 فیصد افراد اب سخت قوانین کی حمایت کر رہے ہیں۔

ہتھیاروں کے خلاف مظاہرہ ۔
ہتھیاروں کے خلاف مظاہرہ ۔

لیکن جائزے سے ظاہر ہوا کہ لگ بھگ امریکیوں کی نصف تعداد کو یہ توقع نہیں ہے کہ سیاستدان اسلحے کے قوانین کی تبدیلی کے لیے کوئی اقدام کریں گے ۔

تاہم سر گرم طالب علموں نے موسم خزاں میں ہونے والے کانگریس کے مڈ ٹرم انتخابات کے لیے ووٹرز رجسٹریشن پر توجہ مرکوز کرنا شروع کر دی ہے ۔ مارچ فار آور لائیوز کی ویب سائٹ نے خبر دی ہے کہ اس نے 38 لاکھ ڈالرز اکٹھے کرنے کا اپنا ہدف تقریبا ًمکمل کر لیا ہے ۔

اداکارجارج کلونی اور ان کی وکیل اہلیہ امل کلونی نے مارچ فار آور لائیوز کے لیے پانچ لاکھ ڈالرز کا عطیہ دیا ہے ۔ اتنا ہی عطیہ ٹی وی اداکارہ اپرا ونفری ، ڈائریکٹر اسٹیو اسپیل برگ اور پروڈیوسر جیفری کیٹزن برگ نے دیا۔ کامیڈین ایلن ڈی جینرز اور فوٹو پبلشنگ سروس شٹرفلائی نے مشترکہ طور پر پچاس ہزار ڈالر کے عطیے کا اعلان کیا۔ جب کہ ماڈل کرسی ٹیجن اور ان کے موسیقار شوہر جون لیجنڈ نے 25 ہزار ڈالر کے عطیے کا اعلان کیا ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG