رسائی کے لنکس

logo-print

اسرائیل میں ایک سال کے دوران دوسری مرتبہ انتخابات


پانچ بار وزیر اعظم رہنے والے بنیامین نیتن یاہو اور سابق آرمی چیف بینی گانتز کے درمیان کانٹے کا مقابلہ متوقع ہے۔

اسرائیل میں رواں سال دوسری مرتبہ عام انتخابات ہونے جارہے ہیں جس کے لیے 60 لاکھ سے زائد ووٹرز اپنا حق رائے دہی استعمال کریں گے۔

وزارت عظمیٰ کی دوڑ میں ​پانچ بار وزیرِ اعظم رہنے والے بنیامین نیتن یاہو اور سابق آرمی چیف بینی گانتز کے درمیان کانٹے کا مقابلہ متوقع ہے۔

منگل کو ہونے والی پولنگ کے لیے 10 ہزار سے زائد پولنگ اسٹیشنز قائم کیے گئے ہیں جب کہ انتخابات کو شفاف بنانے کے لیے سینٹرل الیکشن کمیٹی نے تین ہزار نگرانوں کو تعینات کیا ہے۔

نیتن یاہو اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان دوستانہ تعلقات کی جھلک اسرائیلی انتخابی مہم کے دوران بھی نظر آئی۔ نیتن یاہو کی لیکوڈ پارٹی نے انتخابی مہم کے دوران صدر ٹرمپ کی تصاویر بھی جگہ جگہ آویزاں کی ہیں۔

لیکوڈ پارٹی نے انتخابی مہم کے دوران نیتن یاہو اور امریکی صدر کی تصاویر جگہ جگہ آویزاں کی ہیں۔
لیکوڈ پارٹی نے انتخابی مہم کے دوران نیتن یاہو اور امریکی صدر کی تصاویر جگہ جگہ آویزاں کی ہیں۔

یاد رہے کہ رواں سال کے دوران اسرائیل میں دوسری بار انتخابات منعقد ہورہے ہیں۔ اس سے قبل نو اپریل کو ہونے والے انتخابات میں نیتن یاہو کی قدامت پسند لیکوڈ پارٹی اور بینی گانتز کی بلیو اینڈ وائٹ پارٹی 35، 35 نشستیں جیتنے میں کامیاب رہی تھیں۔

انتخابات کے بعد نیتن یاہو اتحادی جماعتوں کے ساتھ حکومت بنانے کی پوزیشن میں آگئے تھے لیکن وہ اپنے سابق وزیر دفاع ایودگور لیبرمین کی حمایت کے حصول میں ناکام رہے تھے۔ جس کے بعد پارلیمنٹ تحلیل اور دوبارہ انتخابات کا اعلان سامنے آیا۔

نیتن یاہو کی قدامت پسند اور ایودگور لیبرمین کی سیکولر جماعت کے درمیان اختلاف کی وجہ یہ تھی کہ لیبرمین چاہتے تھے کہ جب تک نیتن یاہو مذہبی درس گاہوں کے طلبا کے فوج میں خدمات انجام دینے پر راضی نہیں ہو جاتے وہ حکومتی اتحاد کا حصّہ نہیں بنیں گے۔

رواں سال کے دوران اسرائیل میں دوسری بار انتخابات منعقد ہورہے ہیں۔ (فائل فوٹو)
رواں سال کے دوران اسرائیل میں دوسری بار انتخابات منعقد ہورہے ہیں۔ (فائل فوٹو)

اس بار بھی نیتن یاہو کی لیکوڈ پارٹی اور بینی گانتز کی بلیو اینڈ وائٹ پارٹی کے درمیان کانٹے کا مقابلہ متوقع ہے۔

تاہم فرق صرف یہ ہے کہ لیبر مین اپنے پیش کردہ مطالبے کی وجہ سے پچھلے انتخابات کی نسبت اس بار سیکولر رائے دہندگان کی حمایت حاصل کرنے میں بھی کامیاب دکھائی دے رہے ہیں۔

امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ لیبرمین پچھلے انتخابات کی نسبت زیادہ نشستیں حاصل کرنے میں کامیاب ہوسکتے ہیں۔ جس کے بعد اگلے اسرائیلی وزیراعظم کے چناؤ میں ان کا کلیدی کردار ہو سکتا ہے۔

ایک ہی سال میں دو بار انتخابات کے انعقاد سے امید کی جا رہی ہے کہ اس بار ووٹر ٹرن آؤٹ پچھلے الیکشن کی نسبت قدرے کم ہوگا۔

اسرائیلی انتخابات کا اصل مرحلہ انتخابات کے بعد مخلوط حکومت کی تشکیل کے لیے ہونے والے جوڑ توڑ کا ہوتا ہے۔

انتخابات میں وزیر اعظم نیتن یاہو کا مستقبل داؤ پر ہے۔ جنہیں کرپشن کے تین بڑے اسکینڈلز کا بھی سامنا ہے۔ (فائل فوٹو)
انتخابات میں وزیر اعظم نیتن یاہو کا مستقبل داؤ پر ہے۔ جنہیں کرپشن کے تین بڑے اسکینڈلز کا بھی سامنا ہے۔ (فائل فوٹو)

ان انتخابات کے بعد ممکنہ منظر ناموں میں نیتن یاہو اور بینی گانتز دونوں مل کر بھی مخلوط حکومت بنا سکتے ہیں۔

اس کے علاوہ یہ بھی ممکن ہے کہ کسی معاہدے پر نہ پہنچنے کی صورت میں جنوری میں ایک بار پھر انتخابات ہو جائیں۔

ان انتخابات میں وزیر اعظم نیتن یاہو کا مستقبل داؤ پر ہے۔ جنہیں کرپشن کے تین بڑے اسکینڈلز کا بھی سامنا ہے۔

اسرائیلی انتخابات میں قدامت پسند رجحانات غالب ہیں اور اسرائیلی فوج کے زیر کنٹرول لاکھوں فلسطینیوں کا مستقبل انتخابی وعدوں میں شامل نہیں ہے۔

مشرق وسطیٰ امن منصوبہ

منگل کو ہونے والے اسرائیلی انتخابات اس لیے بھی اہمیت کے حامل ہیں کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ یہ اعلان کر چکے ہیں کہ وہ اسرائیل اور فلسطین کے درمیان دہائیوں سے جاری تنازع کے حل کے لیے 'منصوبے' کا اعلان اسرائیلی انتخابات کے بعد کریں گے۔

اسرائیلی انتخابات میں قدامت پسند رجحانات غالب ہیں۔ (فائل فوٹو)
اسرائیلی انتخابات میں قدامت پسند رجحانات غالب ہیں۔ (فائل فوٹو)

یہ منصوبہ 50 ارب ڈالرز کا اقتصادی پروگرام ہے جو مشرق وسطیٰ میں شامل ممالک فلسطین، اردن، مصر اور لبنان کے لیے ہے۔

وادی اردن کو اسرائیل میں شامل کرنے کا وعدہ

نیتن یاہو انتخابات میں کامیابی کی صورت میں مغربی کنارے سے منسلک وادی اردن کو اسرائیل میں شامل کرنے کے اعلان کرچکے ہیں۔

پچھلے ہفتے اپنے خطاب میں نیتن یاہو کا کہنا تھا کہ نئی حکومت کے قیام کے بعد وہ اسرائیل کی حدود کو وادی اردن اور شمالی بحیرۂ مردار تک بڑھا دیں گے۔

انہوں نے اپنے اس منصوبے کو 'اسرائیلی مشرقی سرحد' کا نام دیا ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG