رسائی کے لنکس

logo-print

فوجی تنصیبات کو پارسل بم بھیجنے والا مشتبہ شخص پکڑا گیا: ایف بی آئی


فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (ایف بی آئی) نے ایک شخص کو گرفتار کیا ہے جن کے لیے کہا جاتا ہے کہ وہ مبینہ طور پر مشکوک اشیا پارسل کرنے کے معاملات میں ملوث تھا، جو واشنگٹن علاقے کے متعدد امریکی فوجی اور انٹیلی جنس تنصیبات کو بھیجے گئے تھے۔

تینتالیس برس کے اِس شخص کی شناخت تھان کونگ پھان کے طور پر کی گئی ہے، جن کے لیے ایف بی آئی نے بتایا ہے کہ پیر کے روز اُنھیں شمال مغربی امریکی ریاست واشنگٹن کے ایوریٹ قصبے میں اُن کے گھر سے حراست میں لیا گیا۔

ایف بی آئی نے یہ نہیں بتایا آیا اس عمل کے محرکات کیا تھے۔ سیاٹل فیلڈ آفس میں ایف بی آئی کی خاتون ترجمان، این ڈائٹرخ نے ’وائس آف امریکہ‘ کو بتایا ہے کہ، ’’ابھی تک، اُن کی کسی دہشت گرد تنظیم یا نظرئے سے وابستگی کا پتا نہیں چلا‘‘۔

مشتبہ شخص کو منگل ہی کے روز عدالت میں پیش کیے جانے کا امکان ہے۔

ایف بی آئی نے کہا ہے کہ پیکیجنز کے تجزئے سے یہ طے ہے کہ اُن میں ’’ممکنہ تباہ کُن ڈوائسز لگے ہوئے تھے اور یوں لگتا تھا کہ بھیجے والا ایک ہی شخص ہے‘‘۔

آدھے درجن سے زیادہ پیکیجز پوسٹ کیے گئے تھے، جن میں وفاقی دارالحکومت کے فورٹ مکنائر اور شمالی ورجینیا کے فورٹ بیلوائر کو بھیجے گئے تھے، جو دونوں امریکی بَری فوج کے اڈے ہیں۔

یہ اناکوستیا بولنگ کے جوائنٹ بیس کو بھی موصول ہوئے، جو واشنگٹن کا فوجی اڈا ہے؛ شمالی ورجینیا کے ’نیول سرفیس وارفیئر سینٹر‘ اور شمالی ورجینیا کے ہی ’سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی‘ کو روانہ کیے گئے تھے۔

یہ پارسل ٹیکساس کے شہر آسٹن میں ہونے والے مہلک بم حملوں کے چند ہی روز بعد روانہ کیے گئے، جن بم حملوں میں دو افراد ہلاک جب کہ چار زخمی ہوئے تھے۔ ٹیکساس میں مشتبہ بم حملہ آور، مارک کنڈٹ نے اپنے آپ کو اُس وقت ہلاک کیا جب پولیس نے اُس کے گرد گھیرا تنگ کیا۔ وہ اپنی گاڑی میں بیٹھا ہوا تھا۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG