رسائی کے لنکس

پومپیو کا 'یو ایس اے جی ایم' میں کیے جانے والے اقدامات کا دفاع


مائیک پومپیو وائس آف امریکہ کے ہیڈکوارٹرز میں نیٹ ورک کے ڈائریکٹر رابرٹ رائلی سے گفتگو کر رہے ہیں۔

پیر کو واشنگٹن ڈی سی میں 'یو ایس اے جی ایم' کے ذیلی نیوز نیٹ ورک 'وائس آف امریکہ' کے ہیڈ کوارٹر میں خطاب کے دوران وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے کہا کہ "ٹرمپ انتظامیہ وی او اے کو اس کے اصل مشن کی جانب گامزن کرتے ہوئے اسے سیاست سے پاک کرنا چاہتی ہے جو یہاں پہلے ہوتی رہی ہے۔"

پومپیو نے مائیکل پیک کے ان خدشات کو دہرایا کہ ایجنسی سیکیورٹی معاملات سے متعلق تحفظات دُور کرنے میں ناکام رہی ہے۔

پومپیو نے کہا کہ "غلطیوں کو تسلیم کیا جانا چاہیے کیوں کہ یہ وہ وائس آف امریکہ نہیں ہے جو ہماری عظیم قوم کے بارے میں ہر غلط بات پر توجہ مرکوز رکھے اور نہ ہی یہ وہ جگہ ہے جو تہران اور بیجنگ کی آمرانہ حکومتوں کو اپنے پلیٹ فارم کے ذریعے کوریج دے۔"

مائیکل پیک (فائل فوٹو)
مائیکل پیک (فائل فوٹو)

امریکی وزیرِ خارجہ نے کہا کہ "جو میری بات سن رہے ہیں میں اُنہیں بتانا چاہتا ہوں کہ یہاں وائس آف امریکہ میں ایک نئی صبح کا آغاز ہوا ہے۔"

مائیک پومپیو نے وائس آف امریکہ کے ان صحافیوں کی بھی تعریف کی جو اُن کے بقول آمرانہ طرزِ حکمرانی والے ممالک کے عوام کو غیر جانب دار اور مستند خبریں پہنچا رہے ہیں۔

پومپیو کی تقریر کے بعد وائس آف امریکہ کے نئے ڈائریکٹر رابرٹ رائلی نے امریکی وزیرِ خارجہ کے ساتھ ایک مختصر مکالمہ کیا اور ایجنسی کے مشن اور کوریج کے حوالے سے گفتگو کی۔

البتہ اُنہوں نے ایجنسی سے منسلک صحافیوں کی جانب سے فراہم کیے گئے سوالات، چھ جنوری کو کیپٹل ہل میں پیش آنے والے واقعے اور امریکی جمہوریت کی علامت کانگریس کی عمارت میں ہونے والی ہنگامہ آرائی سے متعلق گفتگو سے گریز کیا۔

اس ملاقات کے اختتام پر ایجنسی سے منسلک صحافیوں نے پومپیو سے اس واقعے کے بارے میں سوالات پوچھنے کی کوشش بھی کی تاہم وزیرِ خارجہ نے اُنہیں نظر انداز کر دیا۔

ایجنسی کا مؤقف ہے کہ دیگر نیوز نیٹ ورکس سے منسلک صحافیوں کو جگہ کی کمی اور کرونا ایس او پیز کے پیشِ نظر اس ایونٹ میں مدعو نہیں کیا گیا تھا۔

گزشتہ برس جون میں ایجنسی کے چیف ایگزیکٹو کا عہدہ سنبھالنے کے بعد سے مائیکل پیک کو ان کے بعض اقدامات کی وجہ سے تنقید کا سامنا رہا ہے۔

گزشتہ برس نومبر میں امریکی ڈسٹرکٹ عدالت نے ایک مقدمے کے فیصلے تک مائیکل پیک اور ان کے ساتھیوں کو وائس آف امریکہ کی ادارتی آزادی کے معاملات میں براہِ راست مداخلت سے روک دیا تھا۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG