رسائی کے لنکس

logo-print

پاکستان میں پولیو کی صورتِ حال انتہائی تشویش ناک قرار


فائل فوٹو

انڈیپنڈنٹ مانیٹرنگ بورڈ نے پاکستان میں پولیو کی صورتِ حال کو انتہائی تشویش ناک قرار دیا ہے۔ بورڈ کی تازہ رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ خیبر پختونخوا کے جنوبی اضلاع، بلوچستان میں کوئٹہ اور سندھ میں کراچی میں وائرس پھیل رہا ہے۔ اب اس کا پھیلاؤ پولیو وائرس سے پاک علاقوں میں بھی شروع ہو گیا ہے۔

رپورٹ میں یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ اگر ملکی سطح پر انسدادِ پولیو مہم نہ شروع کی گئی۔ تو اس سال پاکستان میں پولیو کیسز توقع سے زیادہ رونما ہو سکتے ہیں۔

انڈیپنڈنٹ مانیٹرنگ بورڈ (آئی ایم بی) ایک آزاد ادارہ ہے جو کہ پولیو سے پاک دنیا کے حصول کی طرف پیش رفت کا جائزہ لیتا ہے۔

بورڈ کی رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ خیبر پختونخوا کے جنوبی اضلاع میں وائلڈ پولیو وائرس کا پھیلنا بند نہیں ہوا۔

رواں برس اب تک ملک بھر میں پولیو کے 65 کیسز سامنے آئے ہیں۔ جب کہ گزشتہ برس جولائی تک ملک بھر میں 56 پولیو کیسز رپورٹ ہوئے تھے جب کہ 2019 میں مجموعی طور پر 147 پولیو کیسز سامنے آئے تھے۔ 2020 میں خیبر پختونخوا میں 22، سندھ میں 21، بلوچستان میں 16 جب کہ پنجاب میں 6 کیسز رجسٹرڈ ہوئے۔

آئی ایم بی کی رپورٹ میں پاکستان سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ پاکستان پولیو وائرس کے خاتمے کو یقینی بنانے کے اقدامات کرے۔

یاد رہے کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے خدشے کے سبب مارچ میں پولیو مہم کو روک دیا گیا تھا۔ لیکن اب اس کرونا وائرس کے کیسز میں کمی کے بعد ملک بھر میں پولیو مہم کو بحال کر دیا گیا ہے۔

انسدادِ پولیو مہم کے دوران ہیلتھ ورکرز سماجی فاصلہ، ماسک کا استعمال اور بچوں کو پولیو کے قطرے پلانے سے پہلے اور بعد میں سینٹائزر کا استعمال ضرور کرتے ہیں۔

حکام کے مطابق اگست میں مہم کے دوران ملک بھر کے 130 اضلاع میں پانچ سال سے کم عمر کے 3 کروڑ 20 لاکھ سے زائد بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے گئے۔

پولیو کے خاتمے کے 'نیشنل ایمرجنسی آپریشن سینٹر' کے مطابق مہم میں 2 لاکھ 25 ہزار تربیت یافتہ اہلکاروں نے حصہ لیا۔ ان اہلکاروں نے کرونا وائرس کے تحت تمام حفاظتی امور کے تحت گھر گھر جا کر بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے ہیں۔

'پی وی ٹو وائرس اب بھی امریکہ سمیت کئی ممالک میں پایا جاتا ہے'

'پوليو ايمرجينسی آپريشن سينٹر پاکستان' کے کو آرڈينيٹر ڈاکٹر رانا محمد صفدر کا کہنا ہے کہ پی وی ٹو پولیو وائرس کا پھیلاؤ نہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا کے لیے بڑا چیلنج ہے۔

وائس آف امریکہ سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر رانا محمد صفدر نے بتایا کہ حکام اس چیلنج سے بخوبی آگاہ ہیں اور پولیو مہم میں اس کے تدارک پر کام کر رہے ہیں۔

ان کے بقول ان کی کوشش ہو گی کہ دسمبر تک پی وی ٹو وائرس پر قابو پا لیا جائے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ وائلڈ پولیو وائرس کیسز اگرچہ باقی دنیا میں ختم ہو گئے ہیں لیکن پی وی ٹو وائرس اب بھی امریکہ سمیت دنیا کے کئی ممالک میں پایا جاتا ہے۔ اس لیے یہ دنیا کے بیشتر ممالک سمیت پاکستان کے لیے بھی تشویش کا باعث ہے۔

ڈاکٹر صفدر کے مطابق پاکستان کی کوشش ہو گی کہ ستمبر، اکتوبر، نومبر اور دسمبر کی انسدادِ پولیو مہم میں پی وی ٹو وائرس کو مستقل طور پر ختم کیا جائے۔ ان کے بقول یہ وائلڈ پولیو وائرس کی نسبت آسان ہدف ہے۔

پی ون، پی ٹو، پی تھری ہے کیا ؟

دنيا بھر ميں پوليو کی تين اقسام ہيں۔ جنہیں پی ون، پی ٹو اور پی تھری کہا جاتا ہے۔

حکومتِ پاکستان کے مطابق پی ٹو وائرس ملک بھر ميں 1999 ميں مکمل ختم ہو چکا ہے۔ پاکستان ميں پی تھری کا آخری کيس اپريل 2012 ميں خيبر ايجنسی میں سامنے آيا تھا۔ 2013 کے بعد سے پاکستان بھر ميں پی ٹو اور پی تھری پولیو وائرس کی اقسام ختم ہو گئی تھيں۔

ملک بھر ميں چونکہ پی ٹو اور پی تھری کا خاتمہ ہو چکا تھا لہٰذا اپريل 2016 ميں حکومت نے پوليو ويکسين کو ٹرائی ويلنٹ سے بائی ويلنٹ ميں تبديل کيا۔

ٹرائی ويلنٹ ويکسين تينوں اقسام کے انسداد کے لیے پلائی جاتی تھی۔ جب کہ بائی ويلنٹ ويکسين پی ون اور پی تھری کے خلاف استعمال کی جاتی ہے۔

بائی ويلنٹ ويکسين شروع کرتے وقت 2016 اور 2017 ميں ملک بھر ميں يہ يقينی بنايا گيا کہ کہيں ٹرائی ویلنٹ ويکسين باقی رہ نہ گئی ہو۔ اس ويکسين کی موجودگی ميں يہ خطرہ برقرار تھا کہ اس کے ذریعے پی ٹو وائرس دوبارہ سامنے آ سکتا تھا۔

پاکستان میں گزشتہ سال پی وی ٹو وائرس کے کیسز دوبارہ سے گلگت بلتستان میں سامنے آئے ہیں جسے کنٹرول کرنے کے لیے حکام سرگرم عمل ہیں۔

'چار ماہ کا تعطل، بچوں کی قوتِ مدافعت پر اثر پڑا ہے​'

خیبر پختونخوا میں 'پولیو ایمرجنسی سینٹر' میں کوآرڈینیٹر ڈاکٹر عبد الباسط کے بقول چار ماہ کے تعطل کی وجہ سے بچوں کی قوتِ مدافعت پر بھی بہت اثر پڑا ہے۔

تاہم وہ توقع کرتے ہیں کہ آئندہ ہونے والی ملک گیر مہم کی وجہ سے اس میں خاطرخوا کمی واقع ہو گی۔

وائس آف امریکہ سے گفتگو میں ڈاکٹر عبد الباسط نے بتایا کہ اگست کی مہم ایم او پی وی ٹو کے تحت کی گئی۔ جب کہ آئندہ ہونے والی مہمات بھی اس نوعیت کی ہوں گی۔

واضح رہے کہ پاکستان میں پولیو ویکسین کے حوالے سے ہر دور میں سازشی نظریات زیرِ گردش رہے ہیں۔ کبھی لوگ پوليو ويکسين کو مغرب کی سازش قرار ديتے ہيں۔ تو کبھی پوليو ورکرز کو جاسوسی کے نيٹ ورک کا آلۂ کار قرار دیا جاتا رہا ہے۔ بعض لوگ اس کو غير شرعی سمجھتے ہیں۔ تو کوئی اسے نسل کشی کی بین الاقوامی سازش قرار دیتا ہے۔

پولیو حکام کے مطابق جعلی پراپیگنڈے اور غلط فہمیوں کی وجہ سے مشکلات بڑھ جاتی ہیں۔ شعور کی کمی کی وجہ سے لوگوں کو آمادہ کرنا اکثر مشکل ہو جاتا ہے۔

صوبہ خیبر پختونخوا کے حجروں میں پولیو سے آگہی مہم
please wait

No media source currently available

0:00 0:02:26 0:00

یاد رہے کہ گزشتہ سال اپریل میں کیے گئے پراپیگنڈے کے باعث پشاور میں پانچ لاکھ بچوں کے والدین نے ویکسین پلانے سے انکار کیا تھا۔

حکام کے مطابق وقت کے ساتھ ساتھ مسائل کی نوعیت بدلتی رہتی ہے۔

دوسری جانب 2012 سے اب تک پوليو ٹيموں پر حملوں ميں 70 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہيں۔ جس ميں پوليو ورکرز کے علاوہ، ان کی حفاظت پر مامور پولیس اہلکار اور عام شہری بھی شامل ہيں۔

پاکستان میں دیگر مسائل کے ساتھ ساتھ انسدادِ پولیو پروگرام کو مالی مشکلات کا بھی سامنا کرنا پڑتا ہے۔ انتظامیہ اس تاثر کو اگرچہ رد کرتی ہے۔ البتہ رواں برس جون میں ہزاروں انسدادِ پولیو رضا کاروں کو نوکری سے فارغ کیا گیا ہے۔

پولیو ایمرجنسی سینٹر کے کوآرڈینیٹر عبد الباسط فنڈز کی کمی سے متعلق اطلاعات سے متفق نہیں ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ انتظامیہ پروگرامز کی ری اسٹرکچرنگ کر رہی ہے۔

انہوں نے وائس آف امریکہ کو بتایا کہ خیبر پختونخوا کے کچھ اضلاع جیسے پشاور، خیبر، جنوبی وزیرستان، شمالی وزیرستان، ٹانک اور بنوں کی کچھ یونین کونسلز میں کمیونٹی بیسڈ ویکسی نیشن سسٹم چل رہا تھا جس کا مطلب تھا کہ ان علاقوں میں جتنے بھی اہلکار ہیں۔ اگر مہم ہو یا نہ ہو، انہیں مختلف تنخواہوں پر بھرتی کیا گیا تھا۔

ان کے بقول لیکن اس نظام کا جائزہ لینے کے بعد حکام اس نتیجے پر پہنجے کہ یہ نظام توقع کے مطابق کام نہیں کر رہا تھا۔ اور ان علاقوں کے ورکرز کی کارکردگی بھی تسلی بخش نہیں تھی جس کے بعد پروگرام ختم کیا گیا ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ پولیو اہلکاروں کو نوکری سے نہیں نکالا گیا بلکہ مہم کے دوران کام کرنے کی اجرت دی جاتی ہے۔ جب کہ اس سے قبل انہیں پورے ماہ کی تنخواہ دی جاتی تھی۔

نائجیریا پولیو فری، پاکستان افغانستان میں کیسز موجود

نائیجیریا کے گزشتہ ماہ پولیو فری ہونے کے اعلان کے بعد صرف پاکستان اور افغانستان دو ایسے ممالک باقی رہ گئے ہیں جہاں پولیو کے کیسز پائے جاتے ہیں۔

پولیو وائرس کا افریقہ سے خاتمہ
please wait

No media source currently available

0:00 0:02:44 0:00

انڈیپنڈنٹ مانیٹرنگ بورڈ نے خدشے کا اظہار کیا ہے کہ مستقبل میں اس مہلک بیماری سے لڑنے کے لیے پاکستان شاید دنیا کا اکیلا ملک ہی رہ جائے۔

تاہم حکام کا کہنا ہے کہ اگر بغیر کسی حادثے کے ملک میں صحیح معنوں میں مہم چلے تو وہ وقت دور نہیں کہ پاکستان کا نام بھی جلد ہی پولیو فری ممالک میں شامل ہو جائے گا۔

فیس بک فورم

متعلقہ

XS
SM
MD
LG