رسائی کے لنکس

logo-print

شمالی کوریا کا ساتواں میزائل تجربہ، امریکہ سے مذاکرات متاثر ہونے کا خدشہ


شمالی کوریا نے ایسے موقع پر میزائل تجربہ کیا ہے جب جمعے کو صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک بیان میں کہا تھا کہ امریکہ کے شمالی کوریا کے ساتھ بہت اچھے تعلقات ہیں۔ (فائل فوٹو)

شمالی کوریا نے چند ہفتوں کے دوران ساتواں میزائل تجربہ کیا ہے جس کے بعد امریکہ اور شمالی کوریا کے درمیان جوہری ہتھیاروں کی تخفیف پر ہونے والے مذاکرات متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

خبر رساں ادارے 'رائٹرز' کے مطابق جنوبی کوریا کی فوج کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا نے ہفتے کو مختصر فاصلے تک ہدف کو نشانہ بنانے والے دو بیلسٹک میزائلوں کا تجربہ کیا ہے۔

شمالی کوریا کی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ اس کے سمندر میں دو بیلسٹک میزائل گرے ہیں جنہیں جنوبی کوریا کی طرف سے فائر کیا گیا تھا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کوریا کے سپریم لیڈر کم جونگ اُن کی جون میں کوریا کے غیر فوجی علاقے میں ہونے والی ملاقات کے بعد شمالی کوریا کی طرف سے کیا گیا یہ ساتواں میزائل تجربہ ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ اور کم جونگ ان کی جون میں ہونے والی ملاقات کے بعد شمالی کوریا کا یہ ساتواں میزائل تجربہ ہے۔ (فائل فوٹو)
ڈونلڈ ٹرمپ اور کم جونگ ان کی جون میں ہونے والی ملاقات کے بعد شمالی کوریا کا یہ ساتواں میزائل تجربہ ہے۔ (فائل فوٹو)

یاد رہے کہ شمالی کوریا نے ایسے موقع پر میزائل تجربہ کیا ہے جب جمعے کو وائٹ ہاؤس میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا تھا کہ امریکہ کے شمالی کوریا کے ساتھ 'بہت اچھے' تعلقات ہیں۔

ٹرمپ نے دعویٰ کیا تھا کہ شمالی کوریا کے سربراہ سے اُن کے براہ راست تعلقات ہیں۔

دونوں ممالک کے سربراہان نے جون میں ہونے والی ملاقات کے دوران بات چیت کا عمل جاری رکھنے اور ایک ساتھ کام کرنے پر اتفاق کیا تھا۔ تاہم امریکہ کو شمالی کوریا کے ساتھ مذاکرات جاری رکھنے میں کامیابی نہیں مل سکی ہے۔

شمالی کوریا نے حال ہی میں ہونے والی امریکہ اور جنوبی کوریا کی مشترکہ فوجی مشقوں پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے اسے شمالی کوریا کے خلاف قرار دیا تھا۔ جس کے بعد پیانگ یانگ کی جانب سے یکے بعد دیگرے میزائل تجربات کا سلسلہ جاری ہے۔

شمالی کوریا کے سپریم لیڈر کم جونگ ان نے میزائل تجربات کی خود نگرانی کی تھی۔ (فائل فوٹو)
شمالی کوریا کے سپریم لیڈر کم جونگ ان نے میزائل تجربات کی خود نگرانی کی تھی۔ (فائل فوٹو)

رواں ماہ کے آغاز پر امریکی صدر کا کہنا تھا کہ کم جونگ ان نے اُنہیں بتایا ہے کہ امریکہ اور جنوبی کوریا کی فوجی مشقوں کے اختتام پر وہ میزائل تجربات بھی روک دیں گے۔

جنوبی کوریا کی قومی سلامتی کونسل کا کہنا ہے کہ امریکہ کے ساتھ ہونے والی فوجی مشقیں ختم ہوچکی ہیں لیکن اس کے باوجود شمالی کوریا کے میزائل تجربات کا سلسلہ جاری ہے جس پر شدید تحفظات ہیں۔

شمالی کوریا کے وزیر خارجہ رایانگ ہو نے جمعے کو ویتنام کے دارالحکومت ہنوئی میں منعقدہ ایک اجلاس میں شرکت کی۔ جس میں امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو بھی شریک تھے۔

اس موقع پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے رایانگ ہو کا کہنا تھا کہ شمالی کوریا امریکہ کے ساتھ مذاکرات اور محاذ آرائی، دونوں کے لیے تیار ہے جب کہ انہوں نے مائیک پومپیو کو امریکہ کی سفارت کاری میں 'بدترین زہر' بھی قرار دیا تھا۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG