رسائی کے لنکس

logo-print

افغانستان: بگرام بیس کے باہر خودکش حملہ، 80 سے زائد افراد زخمی


صوبائی گورنر کی ترجمان کے مطابق حملہ آوروں اور غیر ملکی افواج کے درمیان تقریباً 30 منٹ تک فائرنگ کا بھی تبادلہ ہوا۔ (فائل فوٹو)

افغانستان کے صوبہ پروان میں امریکہ کی فوجی بیس کے باہر خود کش حملے کے نتیجے میں ایک خاتون ہلاک اور 80 سے زائد افراد زخمی ہو گئے ہیں۔

مغربی ملکوں کے فوجی اتحاد 'نیٹو' اور افغان حکام نے تصدیق کی ہے کہ بدھ کو بگرام بیس کے باہر ایک خود کش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔

یہ وہی بیس ہے جہاں چند روز قبل امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ 'تھینکس گونگ' کے موقع پر اچانک پہنچے تھے اور فوجیوں کے ساتھ کچھ وقت گزارا تھا۔

صوبائی گورنر کی ترجمان واحدہ شاہکر کا کہنا ہے کہ خودکش حملے میں زخمی ہونے والے افراد افغان شہری ہیں جو کہ فوجی بیس کی جنوبی راہداری پر موجود تھے۔

ترجمان نے خبر رساں ادارے 'رائٹرز' کو مزید بتایا کہ حملہ آوروں اور غیر ملکی افواج کے درمیان تقریباً 30 منٹ تک فائرنگ کا بھی تبادلہ ہوا۔

نیٹو نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ بگرام بیس پر ہونے والا 'حملہ اچانک ہوا جسے فوری طور پر پسپا' کر دیا ہے۔ حملے میں کسی امریکی یا اتحادی فورسز کی ہلاکت نہیں ہوئی۔

نیٹو اور افغان حکام نے تصدیق کی ہے کہ بگرام ایئربیس کے باہر خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑالیا۔ (فائل فوٹو)
نیٹو اور افغان حکام نے تصدیق کی ہے کہ بگرام ایئربیس کے باہر خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑالیا۔ (فائل فوٹو)

نیٹو کے بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ مقامی افراد کے علاج معالجے کے لیے بیس بنائی جارہی تھے جسے حملے کے نتیجے میں نقصان پہنچا ہے۔ البتہ فوری طور پر حملے کی ذمہ داری کسی گروپ کی جانب سے قبول نہیں کی گئی ہے۔

یاد رہے کہ بدھ کو ہونے والا حملہ ایسے موقع پر ہوا ہے کہ جب امریکہ طالبان کے ساتھ امن مذاکرات کی بحالی کے لیے کوشاں ہے۔

اس سے قبل طالبان نے کابل میں نومبر میں اُس وقت حملہ کیا تھا جب امریکہ اور طالبان امن معاہدے کے قریب پہنچ چکے تھے۔ اس حملے میں ایک امریکی فوجی کی ہلاکت کے بعد صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امن مذاکرات کے خاتمے کا اعلان کیا تھا۔

طالبان کو 2001 میں اقتدار سے بے دخل کیے جانے کے بعد سے اب تک افغانستان کے بیشتر حصے پر اُنہی کا کنٹرول ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG